top of page

2024 کا پاکستان کیسا ہو گا؟ تحریر: ملک حمید اللہ اعوان (سوہاوہ) www.Jhelumnews.uk


2024 کا پاکستان کیسا ہو گا؟

ہر سال کی طرح 2023 بھی مہنگائی، لاقانونیت، بجلی گیس کی لوڈ شیڈنگ، معاشی بدحالی، سیاسی عدم استحکام اور انگنت محرمیوں کے ساتھ گزر گیا

نئے سال کی ابتدا ہی میں عام انتخابات ہونے جا رہے ہیں جس کے لئے سیاسی جماعتوں نے کمر کس لی ہے جماعتیں بھی وہی پرانی اور نعرے بھی وہی کوئی کہتا ہے ملک کے مسائل کا حل ہمارے پاس ہے تو کوئی کہتا ہے میں نوجوان ہوں مجھے موقع دو تو کسی نے شریعت محمدی صلی اللہ علیہ وسلم کے نفاز کے لئے اپنے آپ کو عوام کے سامنے پیش کر رکھا ہے

مایوسیوں کے باوجود ہر بار کی طرح یہ سوچ کر عوام نے ہلکی پھلکی امید لگا رکھی ہے کہ شائد اب کی بار ملک کے ذمہ داران کچھ شرم کا مظاہرہ کرتے ہوئے ملک کی ابتری کو بہتری میں بدلیں

سب کچھ وہی پرانا تو کیا پھر 2024 میں کچھ بدلے گا

جی ہاں اس بار بہت کچھ بدلے گا

کیونکہ اسٹیبلشمنٹ اور سیاسی جماعتوں نے آپسی لڑائی کی بہت بھاری قیمت چکائی ہے اسٹیبلشمنٹ کی جانب سے کیے گئے گزشتہ تجربے نے نہ صرف ملک کو تباہی کے دہانے پر لا کھڑا کیا بلکہ اسٹیبلشمنٹ کو بھی وہ رگڑا لگایا جس کی ماضی میں کوئی نظیر نہیں ملتی

گزشتہ سیاسی تجربے کی جانب سے دانستہ کی گئی تباہ کاریوں سے نمٹنے کے لئے دنیا کے سامنے گڑگڑا کر ملک کو دیوالیہ ہونے سے بچانے کے لئے جو ترلے منتیں کرنی پڑیں اور جس طنز اور ذلت کا سامنا کرنا پڑا اب میرا نہیں خیال کے مزید کسی تجربے یا سیاسی انجنئیرنگ کی کوئی گنجائش بچی ہے کیونکہ پاکستان کی دوست عالمی طاقتوں کی جانب سے واضح پیغام دے دیا گیا ہے کہ اب مزید سیاسی ڈرامے بازی کی گئی تو ہم سے کسی طرح کی امید نہ رکھی جائے اس لئے خوشی سے نہ سہی مجبوری میں ہی سہی لیکن اب ملک کے ذمہ داران ملک کو سنبھالیں گے اور اطلاعات یہ بھی ہیں کے پاکستان کے ذمہ داروں نے دوست ممالک کو یہ گارنٹی دے دی ہے کہ آئندہ ہم ایک مستحکم حکومت بنائیں گے جو اپنی آئینی مدت بھی پوری کرے گی اور اس دوران کسی طرح کی سیاسی چوں چراں نہیں ہو گی حکومت کھل کر بغیر کسی سیاسی مجبوری کے ملکی مفادات میں فیصلے کرے گی اور اسٹیبلشمنٹ نہ صرف حکومت کے فیصلوں کو سپورٹ کرے گی بلکہ فیصلوں پر عمل درآمد کے لئے سازگار ماحول بھی فراہم کرے گی

اب آتا ہوں الیکشن سے پہلے کی صورتحال کیا ہو گی اور کون حکومت میں آئے گا یا یوں کہہ لیجئے کہ کسے حکومت تک پہنچایا جائے گا

اپنا کل کا کالم میں نے عمران خان کے سیاسی مستقبل پر تفصیلی لکھا تھا کے ریاست اپنے سیاسی گناہ عمران خان کو کریش کرنے کے لئے کسی بھی حد تک جائے گی اور دوست ممالک کو دی گئی گارنٹی پر عمل درآمد کروانے کے لئے مسلم لیگ نواز کو انتہائی مستحکم حکومت بنانے میں مدد فراہم کرے گی آئندہ حکومت میں جمعیت علمائے اسلام ف، ق لیگ، استحکام پاکستان پارٹی، ایم کیو ایم، گرینڈ ڈیموکریٹک الائنس، باپ پارٹی اور فنکشنل لیگ، سادہ اکثریتی جماعت مسلم لیگ نواز کے ساتھ حکومت میں ہوں گی اور پیپلز پارٹی 30،35 کے قریب نشستوں کے ساتھ ایک حد مذہبی جماعت کے ساتھ نام کی اپوزیشن کرے گی

اگلے پانچ سال سلیکٹڈ حکومت کہے یا الیکٹڈ کہے لیکن حکومت کے پاس مکمل فری ہینڈ ہو گا کے وہ جیسے چاہے ملک چلائے اور اسٹیبلشمنٹ مافیا کو کچلنے اور حکومت کے رستے میں آنے والی ہر رکاوٹ سے نبردآزما ہونے کی ذمہ داری نبھائے گی اگلے پانچ سال کسی کو احتجاجی یا ذاتی مفادات کی سیاست کرنے کی اجازت نہیں ہو گی جو کچھ ہو گا صرف ملکی مفادات کے لئے ہو گا

اس لئے میں پر امید ہوں کے اب ملک بہتری کی طرف جائے گا ہر آنا والا دن گزرتے دن سے بہتر ہو گا کیونکہ اب کھونے اور کھانے کو کچھ نہیں بچا اب دیکھنا یہ ہے کہ یہ بہتری اور سیاسی استحکام ملک کو دلدل سے نکالنے تک ہو گا یا ہمیشہ ہمیشہ کے لئے

دعا ہے کہ

اللہ کریم ہمارے وطن عزیز کو قائم و دائم رکھے اور یہاں ترقی و خوشحالی کا راج ہو، آمین ثم آمین

0 comments

Recent Posts

See All

احتجاج....... تحریر۔۔۔ حافظ محمد ندیم عنصر۔دینہ

احتجاج....... تحریر۔۔۔ حافظ محمد ندیم عنصر۔دینہ nadeemansir@hotmail.com یہ گل بھی بڑا عجیب ہے کانٹوں کے درمیان رہتا ہے اور خوشی بکھیرتا ہے۔جی ہاں! موسم بہار کے گل کی بات کر رہا ہوں۔لوگ اسے پیار اور مح

bottom of page