top of page

جہلم! CIAسٹاف کے زیر اہتمام اقبال لائبریری روڈ پر نجی ٹارچر سیل کا انکشاف


جہلم(دلنواز احمد Jhelumnews.uk)جہلم سی آئی اے سٹاف کے زیر اہتمام اقبال لائبریری روڈ پر نجی ٹارچر سیل کا انکشاف، منشیات فروشوں سے نجی ٹارچرسیل میں لین دین کا دھندہ، شریف شہریوں پر منشیات ڈال کر جھوٹے مقدمات میں پھنسایا جانے لگا، ڈسٹرکٹ بار ایسوسی ایشن جہلم کے ممبر کے بھائی کو بھی ٹارچر سیل میں حبس بے جا میں رکھنے کے بعد 9D کے مقدمہ میں پھنسا دیا، وکلاء اور شہری سراپا احتجاج۔جہلم پریس کلب میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے ڈسٹرکٹ بار جہلم کے ممبر معروف قانون دان چوہدری قاسم محمود نے کہاہے کہ تھانہ صدر کے علاقہ کالا دیو کا رہائشی و سکونتی ہوں، میرے والد صاحب بھی وکالت کے پیشے سے منسلک رہے ہیں، ہمارا خاندان پڑھا لکھا ہونے کے ساتھ ساتھ اچھی شہرت کا حامل ہے، علاقے میں لوگ ہمیں قدر کی نگاہ سے دیکھتے ہیں، میرا بڑا بھائی چوہدری طیب محمود جو کہ کافی عرصہ بیرون ملک مقیم رہا اور وہاں سے زرِ مبادلہ کما کر وطنِ عزیز میں بھجواتا رہا، والد صاحب کی وفات پر میرا بڑا بھائی طیب محمود واپس آبائی علاقہ کالا دیو میں منتقل ہو گیااور کریانہ کی دکان چلانا شروع کر دی، گزشتہ ماہ 7 مئی کو سفید لباس میں ملبوس 5/6 افراد شام تقریباً5 بجے میرے بھائی کی دکان پر گئے دکان میں موجود غلے سے رقم نکالی اوردکان کھلی چھوڑ کر میرے بھائی کو ساتھ لے گئے اور گلی میں موجود لوگوں کو بتایا کہ ہم لوگ تھانہ سرائے عالمگیر سے آئے ہیں، طیب محمود کے خلاف ہمارے پاس درخواست موجود ہے، اس کے ورثاء کو بتا دینا وہ سرائے عالمگیر تھانے میں رابطہ کرلیں، چوہدری قاسم محمود نے کہا کہ اطلاع ملتے ہی میں سرائے عالمگیر گیا پولیس والوں نے بتایا کہ ہمارے علم میں کوئی ایسی بات نہیں اور نہ ہی سرائے عالمگیر پولیس نے جہلم میں کسی ملزم کو حراست میں لیاہے۔ اس طرح واپس آکر میں نے تھانہ سٹی، سول لائن، تھانہ صدر، سی آئی اے سٹاف جا کر اپنے بھائی کی بابت دریافت کیا لیکن پولیس نے بتایا کہ اس نام کاکوئی بندہ ہمارے پاس موجود نہیں، شام تقریباً7 بجے میں نے اپنے بھائی کے موبائل فون نمبر پر رابطہ قائم کیا تو کسی نامعلوم شخص نے میرا فون ایٹنڈ کیا اور مجھے دلاسہ دیا کہ پریشان ہونے کی ضرورت نہیں آپ کا بھائی ہمارے پاس موجود ہے، آپ ابھی اقبال لائبریری روڈ پر آجائیں، میں کال ختم ہوتے ہی اقبال لائبریری روڈ پر پہنچ گیا وہاں پر پولیس انسپکٹر جواد انور، سب انسپکٹر قمر سلطان، اسسٹنٹ سب انسپکٹر مرزا محمد فیاض پولیس کانسٹیبل عنصر بٹ اور خرم نامی شخص موجود تھے، جنہوں نے کہا کہ آپ ہمارے ساتھ معاملات کرلیں لیکن اس بارے کسی شخص سے زکر نہیں کرنا میں نے واپسی پر اپنے دوست وکلاء سے مشورہ کیا جب اگلے روز میں اقبال لائبریری روڈ جہاں میرے بھائی کو سی آئی اے سٹاف نے نجی ٹارچر سیل میں رکھا ہوا تھا، پولیس سی آئی اے سٹاف کے ملازمین نے مجھے دیکھتے ہی کہا کہ آپ کے ساتھ جو معاہدہ ہوا تھا وہ آپ نے توڑ دیا ہے اب ہم کارروائی کریں گے۔ اس طرح سی آئی اے سٹاف نے میرے بھائی پر 5 کلو سے زائد منشیات کا مقدمہ درج کرکے جیل بھجوادیا جو کہ ہمارے ساتھ سخت زیادتی کے مترادف ہے، چوہدری قاسم محمود نے نگران وزیراعلیٰ پنجاب، انسپکٹر جنرل پنجاب پولیس، چیف جسٹس لاہور ہائی کورٹ سے مطالبہ کیاہے کہ میرے بھائی کے خلاف درج مقدمے کی انکوائری کروائی جائے میرے بھائی کو تاوان کے لئے اغواء کرنے والے پولیس افسران و اہلکاروں کے خلاف قانونی کارروائی عمل میں لائی جائے اور میرے بے گناہ بھائی کو باعزت بری کیا جائے۔موقف جاننے کے لئے پولیس ترجمان سے رابطہ قائم کیاگیا تو انہوں نے کہا کہ ڈی پی او جہلم ناصر محمود باجوہ نے ڈی ایس پی ملک عقیل عباس، ڈی ایس پی سید غلام عباس شاہ پر مشتمل انکوائری کمیٹی قائم کردی ہے،اگر سی آئی اے سٹاف کا عملہ قصور وار پایا گیا تو سخت محکمانہ کارروائی کی جائے گی۔

0 comments

Recent Posts

See All

دینہ(رانا عاصم) گاؤں مدوکالس میں اچانک2افراد انتقال کر گئے۔ پہلے حاجی باز گل خان دل کا دورہ پڑنے جاں بحق ہوئے۔اس کے بعد نوجوان راناطاہر محمود بھی وفات پا گئے۔دونوں کی نماز جنازہ ہفتہ کو ادا کی جائے گی

دینہ ( رانا عاصم سے)تحصیل دینہ کے گاؤں مدوکالس میں دو افراد اچانک انتقال کر گئے۔ اچانک اموات سے پورا گائوں سوگوار ہو گیا،پہلے معروف ٹرانسپورٹر جان گل خان کے چھوٹے بھائی ، جمشید خان اور ویلڈر شمریز خان

bottom of page