top of page

جہلم کی تاریخی مسجد افغاناں تباہی کے دھانے پر مسجد کے ارد گرد گندگی اور غلاظت کے ڈھیر لگ گئے



جہلم (Jhelumnews.uk ڈسٹرکٹ رپورٹر)  جہلم کی تاریخی مسجد افغاناں تباہی کے دھانے پر مسجد کے ارد گرد گندگی اور غلاظت کے ڈھیر جبکہ سیوریج کا پانی مسجد کے باہر ایک جوہڑ کی شکل اختیار کر چکا محکمہ اوقاف نے بھی اس مسجد پر نظر کرم رکھنا چھوڑ دیا جبکہ انتظامیہ کو بار بار بتانے کے باوجود بھی سیوریج کا پائپ نہ ڈل سکا  تفصیلات کے مطابق جہلم کی تاریخی مسجد افغاناں محکمہ اوقاف کی عدم توجہ سے تباہی کے دہانے پر پہنچ چکی مسجد کے ارد گرد گندگی اور غلاظت کے ڈھیر جبکہ سیوریج کی درستگی نہ ہونے سے مسجد کے باہر ایک جوہڑ بن چکا جس سے تعفن بھی پھیلنے لگا  جب سے گرین بیلٹ بنائی گئی ہے اس وقت سے اس مسجد کے حسن کو تباہ کیا جا رہا ہے محکمہ اوقاف کی عدم توجہ سے مسجد افغاناں اب کھنڈرات کا منظر پیش کرنے لگی دو سال پہلے محکمہ اوقاف اور چیف سیکریٹری پنجاب نے اس مسجد کا دورہ کیا اور اس کی بہتری کے لیے احکامات بھی جاری کیے جبکہ انتظامیہ کی طرف سے کئی سابق ڈپٹی کمشنرز نے بھی دورے کیے اور مسجد افغاناں کی تزئین و آرائش کے لیے احکامات بھی جاری کیے جبکہ سابق ڈپٹی کمشنر سیف انور جپہ نے اس گرین بیلٹ پر ایک خوبصورت پارک بنانے کا بھی وعدہ کیا اور ساتھ ہی مسجد کی  سیوریج لائن کے لیے نئے پائپ ڈالنے کا وعدہ بھی کیا  لیکن وہ وعدہ ابھی تک وفا  نہ ہوسکا اہل علاقہ کا کہنا ہے کہ کبھی اس تاریخی مسجد افغاناں کو دور دور سے لوگ دیکھنے کے لیے آتے تھے لیکن اب اس کی حالت محکمہ اوقاف اور انتظامیہ نے یہ کر دی ہے کہ اب شہر کے لوگ بھی یہاں پر نہیں آتے کیونکہ مسجد کے ارد گرد گندگی اور غلاظت کے ڈھیر لگ چکے ہر طرف تعفن پھیلا ہوا ہے گرین بیلٹ نے اس مسجد کے حسن کو تباہ کر دیا ہے جبکہ شہر بھر کا کوڑا کرکٹ مسجد کے سامنے دریائے جہلم میں پھینکا جاریا ہے جس سے دریائے جہلم کا حسن بھی گندگی اور غلاظت کے ڈھیر میں تبدیل کر دیا گیا ہے محکمہ اوقاف کی اس مسجد کا کوئی بھی پرسان حال نہیں مسجد کے بل بھی چندہ جمع کر کے دیے جاتے ہیں شہریوں نے محکمہ اوقاف کے افسران اور ڈپٹی کمشنر سمیع اللہ فاروق سے مطالبہ کیا ہے کہ اس تاریخی مسجد افغاناں پر نظر کرم کیا جائے اور اس کے ارد گرد گندگی اور غلاظت کے ڈھیر کو ختم کیا جائے اور مسجد کے سیوریج  کے لیے نئی پائپ لائن ڈالی جائے تاکہ مسجد کے گرد بنے جوہڑ کو ختم کیا جاسکے

0 comments

Comments

Rated 0 out of 5 stars.
No ratings yet

Add a rating
bottom of page