top of page

جہلم:مردم شماری میں پولیس اہلکاران کے ساتھ زیادتی،دوہرا معیار،اپنے خرچے پر ڈیوٹی کرنے پر مجبور

جہلم(ڈاکٹر سہیل امتیاز خان) پنجاب ،سندھ ،بلوچستان گلگت بلتستان میں ڈیجیٹل طریقہ سے مردم شماری کی جا رہی ہے لیکن تمام صوبوں میں پولیس ملازمین کے لیے ،مردم شماری بن گئی پولیس ملازموں کے لیے وبال مال،اپنے خرچے پر سفر کرکے دور دراز کے گاؤں میں ڈیوٹی کے لیے روزانہ وقت پر پہنچنا محال،ملازمان پریشان حال،پٹرول کی آسمان سے باتیں کرتی قیمتیں،کیسے پہنچیں ڈیوٹی پوائنٹ پر ملازموں کی حال دوہائی،پولیس ملازموں کا اپنے محکمہ اور حکومت سے غم و غصے کا اظہار اور شکوے،اساتذہ حضرات سرکاری تنخواہیں بھی لیں اور مردم شماری کے عوض 60،60 ہزار الگ سے،پولیس کے ساتھ کیوں ہے یہ دوہرا معیار کیوں ہے؟،کیا پولیس ملازمین کے بال بچے نہیں،کیا انکا گھر بارنہیں،کیا پولیس ملازمین کو پیسوں کی ضرورت نہیں،کیا پولیس ملازمین اتنے ہی امیر ہیں,آخر ارباب اختیار کو کیوں خیال نہیں آتا بیچاری پولیس کی فلاح کا۔۔۔کم ترین تنخواہیں مگر سہولیات صفر۔ پولیس اہلکاران کی حوصلہ شکنی کی جا رہی ہے۔جب کہ ان کی تنخوائیں بڑھا کر اور مردم شماری میں اساتذہ کی طرح معاوضہ دے کر حوصلہ افزائی کی ضرورت ہے













0 comments
bottom of page