top of page

جہلم:شہر کے سیوریج کے نظام کو تباہی کے دہانے پر لانے والے پلازہ مالکان، دکاندار بھی برابر کے شریک

جہلم ( Jhelumnews.uk ڈسٹرکٹ رپورٹر)  شہر کے سیوریج کے نظام کو تباہی کے دہانے پر لانے والے پلازہ مالکان اور دکاندار حضرات بھی برابر کے شریک پلازہ مالکان اور دکانداروں نے نالوں پر  تھڑے اور سیڑھیاں بنا کر سیوریج کے نظام کو تباہ  کر دیا جبکہ  ان پلازہ مالکان کو تھڑے اور سیڑھیاں بنانے میں  انتظامیہ ہی قصور وار ہے جنہوں نے بناتے وقت ان کو روکا نہیں   تفصیلات کے مطابق  شہر کے سیوریج نظام کی تباہی کو جب دیکھا گیا تو  بازاروں مارکیٹوں اور پلازہ مالکان  نے نالوں پر بڑے بڑے تھڑے بنا کر نالوں کو بند کر دیا  یے اور جبکہ سوال یہ ہے کہ جب ان لوگوں نے نالوں پر  تھڑے اور سیڑھیاں بنانا شروع کیں تھیں تو  کیا اس وقت میونسپل کمیٹی کے انکروچمنٹ آفیسر میٹھی نیند سو رہے تھے  وہ کیوں نہیں ایکشن کرتے اور ان تھڑوں کو کیوں نہیں توڑتے جبکہ دکانداروں نے اپنی دکانوں سے گندگی اور غلاظت کے ڈھیر کو نالوں کو  ڈسٹ بن سمجھ کر  پھینکنا شروع کر دیا ہے کوئی ایسا نالہ نہیں جو ان دکانداروں نے گندگی سے بھرا نہ ہو اور پھر کہتے ہیں کہ انتظامیہ کی ناقص کارکردگی   شہر کے سیوریج کے نظام کو تباہی کے دھانے پر لانے والے پلازہ مالکان دکان دار  بھی برابر کے  شریک ہیں شہریوں کا کہنا ہے کہ انتظامیہ تو قصوروار  ہے ہی لیکن کیا کبھی کسی دکاندار نے اپنی دکانوں کی گندگی اور غلاظت کو  نالوں میں پھیکنے سے گریز کیا  کیا جن بڑے بڑے شاپروں میں ان کے کپڑے اور دوسری اشیاء آتی  ہیں اور کو خالی کر کے شاپروں کو نالوں میں نہیں پھینکا جاتا کیا پلازہ مالکان نے پلازہ بناتے وقت  پارکنگ کے لیے جگہ چھوڑی کیا انہوں نے سرکاری نالوں پر تجاوزات نہیں کیں کیا آپ اپنے مہذب شہری ہونے کا حق ادا کرتے ہیں کیا آپ اتنے صفائی پسند ہیں کہ اس  گندگی اور کوڑے کے ڈھیر کو بلدیہ کی طرف سے رکھی گئی کوڑا ٹرالی میں پھینک کر ایک اچھے شہری ہونے کا ثبوت دیں کیا آپ نے اپنی دکانوں کے آگے بنے نالوں پر بڑے بڑے تھڑے بنا کر تجاوزات نہیں کیں پھر آپ کس طرح ایک صحافی کو فون کر کے بتاتے ہیں کہ سیوریج کا  پانی ہماری دکانوں میں داخل ہوگیا ہے آپ ڈپٹی کمشنر کے خلاف خبر لگائیں انتظامیہ کی آنکھیں کھولیں لیکن اب میڈیا آپ کی آنکھیں بھی کھولے گا کبھی اپنے گریبانوں میں بھی جھانک لیجئیے گا  کہ اصل قصوروار کون ہے  ہم اس شہر کے سیوریج کے نظام کی تباہی میں کتنے زمہ دار ہیں کسی بھی گلی محلے میں دیکھ لیجئیے گا سب نالیوں میں شاپر اور کئی دوسری اشیاء نالیوں میں پڑی ملیں گی سالن اور چاول تک تو نالیوں میں پڑے ہوتے ہیں اور پھر کہتے ہیں کہ انتظامیہ کہاں ہے اس وقت مین بازار  رام دین بازار تحصیل روڈ نیا بازار ریلوے روڈ  سول لائن اور چاندنی چوک میں دکانداروں نے تھڑے بنا کر نالوں کو بند کر رکھا ہے

0 comments

Recent Posts

See All
bottom of page