top of page

جہلم۔دینہ:جگہ جگہ غیر قانونی طور پر موبائل سم فروخت کرنے والوں کے اسٹال سج گئے

جہلم (Jhelumnews.uk ڈسٹرکٹ رپورٹر) دینہ و جہلم   شہر میں جگہ جگہ غیر قانونی طور پر موبائل سم فروخت کرنے والوں کے اسٹال سج گئے  آتے جاتے سادہ لوح لوگوں کو آوازیں دے کر فری سم کا لالچ دیتے ہیں اور اکثر دیکھنے میں آیا ہے کہ شناختی کارڈ نمبر اور فنگر پرنٹس لے لیتے ہیں اور بعدازاں کہتے ہیں کہ آپکے نام پر پانچ سم ہیں لہذا آپکو سم نہیں مل سکتی جس کے بعد شہریوں کے لیے فنگر پرنٹس پر سم کسی اور کو مہنگے داموں فروخت کر دی جاتی ہے  تفصیلات کے مطابق شہر کے چوک چوراہوں پر غیر قانونی طور پر موبائل سم فروخت کرنے کا سلسلہ جاری ذرائع کے مطابق سادہ لوح شہریوں کے فنگر پرنٹس لے کر سم کسی اور کو مہنگے داموں فروخت کر دی جاتی ہے اس کا کوئی بھی ریکارڈ موجود نہیں چند لوگ خطرناک بھی ہو سکتے ہیں جو کہ شناختی کارڈ اور فنگر پرنٹس کا غلط استعمال کر سکتے ہیں۔ اتنی بار فنگر پرنٹس تو پولیس بھی نہیں لگواتی جتنی دفعہ یہ مین چوک میں بیٹھ کر سرعام سادہ لوح عورتوں مردوں سے لگوالیتے ہیں کہیں تو ایسے واقعات رونما ہوچکے ہیں کہ سم کسی کے نام پر ہے اور استعمال کوئی اور کر رہا ہے خاص کر جرائم پیشہ افراد ایسی سموں کا استعمال کرتے ہیں  اسی لیے تو  کبھی کبھی  یہ ٹولہ گلی محلے اور  گھر گھر جا کر فری سم کا لالچ دیتے ہیں ڈھیروں سبز باغ بھی دکھاتے ہیں کہ ہزاروں فری منٹ انٹرنیٹ فری وغیرہ وغیرہ کسی حد تک یہ کامیابی حاصل کرلیتے ہیں ان پڑھ خواتین ان کے جھانسے میں جلد آجاتی ہیں جوکہ فوری طور پر اپنا شناختی کارڈ ان کے حوالے کردیتی ہیں ڈسٹرکٹ پولیس آفیسر جہلم ناصر محمود باجوہ سے شہریوں نے مطالبہ کیا ہے کہ وہ ان سمیں فروخت کرنے والوں کا ڈیٹا چیک کریں جبکہ عوامی سماجی مذہبی سیاسی و تاجر برادری نے متعلقہ انتظامیہ سے مطالبہ کیا ہے کہ ان کی چیکینگ کو تفتیش سمجھ کر کیا جائے تاکہ کئی بے گناہ لوگ ظلم سے بچ سکیں کیونکہ یہ لوگ اپنے چند پیسوں کی خاطر کسی بے گناہ کی ذندگی تباہ کرنے کا کردار ادا کرنے میں دیر نہیں کرتے  شہریوں سے بھی گزارش ہے کہ وہ جب بھی کوئی سم خریدیں متعلقہ کمپنی کے آفس سے خریدیں  

0 comments
bottom of page