top of page

تحصیل ہیڈ کوارٹر ہسپتال میں ڈاکٹروں کی کمی کے باعث سینکڑوں مریضوں کو دشواری کا سامنا

پنڈدادنخان(مشتاق رضا سے) تحصیل ہیڈ کوارٹر ہسپتال میں ڈاکٹروں کی کمی کے باعث سینکڑوں مریضوں کو دشواری کا سامنا شہریوں کو پنجاب حکومت کی طرفسے ادویات مل رہی ہیں لیکن سینکڑوں نفوس پر مشتمل تحصیل ہیڈ کواٹر ہسپتال کے لئیے ڈاکٹر نایاب ہوگئے ہیں باہر سے آنے والے ڈاکٹر یہاں زیادہ دیر نہیں رکتے فوری ٹرانسفر کرا کر شہروں کا رخ کر جاتے ہیں اس کی سب سے بڑی وجہ ڈاکٹر کی رہائش گاہ کا ہے حکومت کروڑوں روپے کی ادویات اور ہسپتال کی تزہین و آرائش پر لگا رہی ہے لیکن ڈاکٹروں کی رہائشگاہ کے لئے کوئی انتظامات نہیں کر رہی یہی وجہ ہے کہ یہاں ڈاکٹر آنے کو تیار نہیں جبکہ ایم ایس کے لئیے سرکاری رہائش نہیں ہے سابق ایم این اے اور سابق ایم پی اے صاحبان نے بھی اس طرف توجہ نہیں دی ہسپتال میں لیبارٹری ڈیجیٹل ایکسرے مشین زچہ بچہ اور بلڈ کی سہولت موجود ہے لیکن ڈاکٹروں ڈسپنسر اور دیگر سٹاف کی کمی ہے پنجاب حکومت 2018 میں نئے ڈاکٹر کو95 ہزار روپےاور سنئیر ڈاکٹروں کو ایک لاکھ 90ہزار روپے تنخواہ دے رہی تھی اب نئے اور سنئیر ڈاکٹر لاکھوں میں تنخوایں لے رہے ہیں اس کے باوجود وہ سعودیہ انگلینڈ کینیڈا بنگلہ دیش اور دیگر ممالک کا رخ کر رہے ہیں ڈاکٹروں کی کمی کی وجہ سے مریض علاج معالجہ کے لئیے خوار ہورہے ہیں کئ ڈاکٹر سرکار سے بھی تنخوایں لے رہے ہیں اور پرائیویٹ ہسپتال میں بھی ملازمت کر رہے ہیں کئ ایک نے اپنے بہترین ہسپتال بنائے ہوئے ہیں ڈاکٹروں کی کمی کے باعث لوگ پرائیویٹ ہسپتال کا رخ کرتے ہیں جہاں ڈاکٹر کی فیس لیبارٹری ٹیسٹ اور ادویات کی مد میں مریض کو کنگال کر دیا جاتا یے عوامی سماجی حلقوں نے وزیر اعلی پنجاب سے مطالبہ کیا کہ فی الفور تحصیل ہیڈ کوارٹر ہسپتال پنڈدادنخان کے کیلئے ڈاکٹر اور ان کی رہائیشگاہیں مہیا کریں

0 comments
bottom of page