top of page

تحصیل گجرخان ضلع راولپنڈی میں پولیس قبضہ مافیا کے ساتھ مل کر ناجائز قبضہ کرانے میں مشغول اور سائلین کو سرعام دھمکیاں دینے لگی۔وزیراعلی پنجاب ۔آئی جی پنجاب کے نام کھلا خط

وزیراعلی پنجاب۔ آئی جی پنجاب کے نام کھلا خط

تحصیل گجرخان ضلع راولپنڈی میں پولیس قبضہ مافیا کے ساتھ مل کر ناجائز قبضہ کرانے میں مشغول اور سائلین کو سرعام دھمکیاں دینے لگی تفصیلات کے مطابق پولیس چوکی قاضیاں تھانہ گوجرخان کے علاقہ اراضی چوہڑ مل میں پولیس کی ملی بھگت سے قبضہ مافیا کا راج قبضہ مافیا نے دن دہاڑے غریب ادمی کی زمین پر قبضہ کر لیا حتی کے مین گیٹ یعنی راستہ ہی بند کر دیا ون فائیو پر کال چلائی گئی لیکن پولیس دو گھنٹے بعد موقع پر پہنچی جبکہ قبضہ مکمل ہو چکا تھا سائلین انچارج چوکی کو ایپلیکیشن دی اس نے ایپلیکیشن پر کوئی کروائی نہ کی الٹا سائلین کو ہی ڈرایا دھمکایااسی اثنا میں قبضہ مافیا سائلین کو ڈرانے دھمکانے کے لیے ہوائی فائرنگ کرتے ہیں سائلین کو جان سے مارنے کی دھمکیاں دی جس کی کی وجہ سے سائلین جس میں خواتین اور بچے بھی شامل ہیں سہم گئے اس دوران علاقہ کے نمبردار راجہ اشفاق کیانی آل پاکستان نمبردار ایسوسی ایشن رجسٹرڈ کے چیئرمین ؤ سرپرست اعلی نے ون فائیف کال کی جس کے بعد سائلین کی طرف سے بھی ون فائیف کال کی جس پر موقع پر آنے کے بجاے الٹا سائیلین کو کہتے رہے ویڈیو بنالیں کافی دیر انتظار کے بعد جب ون فائیف کی کال پرکسی نے رابطہ نہ کیا تو تنگ آ کر تھانہ گوجرخان ایس ایچ او کے پاس بوڑھی ماں بیوی اور معصوم بچوں کے ساتھ تھانہ میں حاضر ہوئے ایس ایچ او صاحب نے ڈیوٹی افسر جہانگیر بیگ کو ہدایت کی کے مظلومین کی قانونی مدد کرو جس بات کو ڈیوٹی افسر نے سنی ان سنی کر دی اور اس کے بعد سائلین سے ڈیزل کے پیسے مانگتا رہا اور بد تمیزی دھکے مار کر تھانے سے باہر نکال دیا رات 3 بجے تک تھانے میں زلیل و خوار ہونے اور انصاف سے نا امید ہو کر گھر واپس آ گئے اس کے بعد نمبردار راجہ اشفاق کیانی آل پاکستان نمبردار ایسوسی ایشن کے چیئرمین اور سرپرست اعلی کے ساتھ ایس ایچ او کے حضور پیش ہوے سارہ واقع سنایا جس کو جناب نے سنی ان سنی کر دی، (آل پاکستان نمبردار ایسوسی ایشن رجسٹرڈ)پنڈی ڈویژن کے عہدیداران نمبرداران ڈی ایس پی صاحب کے حضور پیش ہوئے لیکن وہاں سے بھی خاطر خواہ جواب حاصل نہ ہوا اسی اثنا میں قبضہ مافیا سائلین کو ڈرانے دھمکانے کے لیے ہوائی فائرنگ کرتے ہیں اور درخواست میں موجود گواہوں کے گھر جا کر ہمراہی لیس اسلحہ گواہی نہ دینے کا کہتے ہیں اور گواہی دینے کی صورت میں قتل کی دھمکیاں دیتے ہیں علاقے میں عجیب کیفیت کا سماں ہے خوف و ہراس کی علامت بنایا ہوا ہے اور یہ سب کچھ پولیس ملازمین کی زیر سرپرستی ہو رہا ہے حتی کہ بااثر قبضہ مافیا نے علاقے کے بدنام زمانہ سزا یافتہ غنڈے رکھے ہوئے ہیں جو سائلین کے گھر جاکر کہتے ہیں کہ اگر بات نہ مانی تو گولی مار دیں گے کہتے ہیں کہ قانون ہمارا کچھ نہیں بگاڑ سکتا کیونکہ اس سے پہلے بھی یہ خبر اخبارات میں آ چکی ہے اور پولیس کا کہنا ہے کہ خواہ اخبارات میں دو یا جہاں بھی جانا ہے جس کر ہماری رپورٹ کرو ہمارا کوئی کچھ بگاڑ نہیں سکتا یعنی کہ وہ قانون سے بالاتر ہیں پولیس جو پولیس ملازمین ہیں ان میں اورنگزیب ولد قربان حسین شمریز ولد قربان حسین اور ان کے ساتھ ان کے بھائی بیٹے اسلحہ کے ساتھ لیس مدذکرہ جگہ پر اتے ہیں اور ہوائی فائرنگ کر کے جاتے ہیں اور سرعام دھمکیاں دیتے ہیں کہ زمین چاہیے یا جان چاہیے اگر جان پیاری ہے تو اس زمین کو بھول جاؤ ہمارے وزیراعلی پنجاب اور ائی جی پنجاب سے اصلاح احوال کی اپیل ہے کہ اس دور میں جب کہ ذرائع ابلاغ عروج پر ہیں اور میڈیا سوشل میڈیا اور پرنٹ میڈیا کی مدد سے حقائق جاننے میں دشواری نہ ہے اور اس کے علاوہ تمام محکمہ مال کا ریکارڈ جو کہ کتابوں میں موجود ہے جمع بندیوں میں موجود ہے البتہ کمپیوٹر رائز بھی ہو چکا ہے اور گراؤنڈ ریلٹی بھی موجود ہے اس کے باوجود ہمارے علاقے میں قبضہ مافیا کا راج ہے اور یہ صرف اور صرف پولیس کی زیر سرپرستی ہے نوبت یہاں تک ان پہنچی ہے کہ اب پولیس پارٹی کا رول ادا کر رہی ہے یعنی سائلین کا مقابلہ صرف قبضہ مافیہ سے نہیں بلکہ پولیس سے چل رہا ہے ہم غریب لوگ ہیں اور قبضہ مافیا اپنے پیسے کے بل بوتے پر اور اثر ر و رسوخ استعمال کر کے ہم پر ظلم کر رہے ہیں اور ہم اپنے بچوں کے ہمراہ اپنی جان بچا کر چھپنے پر مجبور ہو چکے ہیں خدارا ہماری مدد کی جائے اور پولیس کو تنبیہ کی جائے کہ وہ قبضہ مافیا کا ساتھ نہ دے بلکہ حقائق پر مبنی دستاویز پر عمل درامد کروائے اور ناجائز قبضہ کو ختم کروائے، اور گیٹ (راستہ) کھلوائے،محکمہ پولیس جس کو عوام کا محافظ جانا جاتا ہے ان کی ملی بھگت سے شرفاء اور سفید پوش لوگوں کو بے عزت کیا جاتا ہے جو کوئی شریف آدمی حق کی بات کرتا ہے پولیس اپنے غنڈوں کے زریعے ان کو سرعام بے عزت کرواتی ہے اور گالیاں اور ہوائی فائرنگ کرکے ڈرایا دھمکایا جاتا ہے جناب عالی یہ سب واقعات کسی جنگل یا صحرا کے علاقے میں وقوع پذیر نہیں ہورے بلکہ دارالخلافہ اسلام آباد سے کچھ کلومیٹر فاصلے پر تحصیل گوجر خان میں ہورے ہیں اور اس کے علاؤہ جناب وزیراعلی پنجاب محسن علی نقوی صاحب اور جناب آئی جی پنجاب ڈاکٹر عثمان صاحب آپ یقین کریں کہ پولیس کی ایما پر ہمارے علاقے میں منشیات فروشی بھی عروج پر ہے اور جگہ جگہ نشییوں کے ٹھکانے ہیں اور اگر کوئی شریف آدمی پولیس چوکی جبر میں شکایت کرتا ہے تو منشیات فروش اس شریف آدمی کا جینا دوبھر کر دیتے ہیں اور یہ سب پولیس کی زیر نگرانی ہورہا ہے

اتنی اندھیر نگری تو کبھی بھی دیکھنے کو نہیں ملی جتنی پولیس چوکی جبر تحصیل گوجر خان ضلع راولپنڈی میں ہورہی ہے

راجہ اشفاق احمد کیانی چیئرمین و سرپرست اعلیٰ آل پاکستان نمبردار ایسوسی ایشن راولپنڈی ڈویژن۔

العارض

(محمد ابرارنقیبی ولد محمد ریاض آراضی چوہڑمل تحصیل گوجرخان ضلع راولپنڈی )

03088850822

03377864143

03088867786

0 comments

コメント

5つ星のうち0と評価されています。
まだ評価がありません

評価を追加
bottom of page