top of page

اے سی دینہ کی ذاتی دلچسپی سے بڑی حد تک تجاوزات پر کنٹرول کر لیا گیا

دینہ(پروفیسر خورشید احمد ڈار)اسسٹنٹ کمشنر دینہ نے مفاد عوام جو جرآت مند قدم اٹھایا ہے قابل تحسین ہے ۔مثبت نتائج کے لیے اس کا تسلسل ازحد ضروری ہے ۔سماجی زعماء دینہ ۔تفصیلات کے مطابق منگلا روڈ دینہ ٹریفک کی روانی کے حوالے سے ایک عرصہ دراز سے درد سر بن چکی تھی گزشتہ چند روز سے اے سی دینہ کی ذاتی دلچسپی سے بڑی حد تک تجاوزات پر کنٹرول کر لیا گیا ہے ۔۔۔سڑک کی صرف ایک طرف موٹر سائیکل اور کاروں کو کھڑا ہونے کی اجازت ہے بلدیہ دینہ کے اہکاران مختلف جگہوں پر کھڑے ہو کر مائیک کی مدد سے ٹریفک کو کنٹرول کرنے میں مصروف ہیں سماجی زعماء دینہ نے اسسٹنٹ کمشنر دینہ سے اپیل کی ہے کہ وہ درج ذیل سفارشات کو مدنظر رکھتے ہوئے اس مسلے کا مستقل حل کرسکتے ہیں ۔۔۔مثلاً دینہ تا میرپور جانے والی ویگنز کو پابند کیا جائے کہ وہ بائی پاس کا راستہ استعمال کریں کیونکہ دوران سفر انہوں نے مسافر کو اٹھانا نہیں ہوتا اسی طرح دیگر گاڑیوں کو بھی پابند کیا جا سکتا ہے ڈی ایس پی ٹریفک کی خدمات حاصل کر کے تمام رکشے والوں کو پابند کیا جائے کہ وہ داتا روڈ تا چوک دینہ رکشے کا استعمال نہیں کر سکتے داتا روڈ سے پہلے وہ کھڑے ہو سکتے ہیں بلاوجہ تمام روٹس پر چلنے والے رکشے داتا روڈ تا مین چوک دینہ کے درمیان چلنا مسائل کی جڑ ہے لہذا دونوں جانب ٹریفک پولیس کے اہلکار تعینات کر دیے جائیں اس حوالے سے رکشہ یونین کے صدر کی بھی خدمات حاصل کی جا سکتی ہیں صرف مریضوں کو لے جانے والے رکشے مزکورہ جگہ پر گزر سکتے ہیں اسی طرح منگلا روڈ کے دونوں جانب جہاں بھی کوڑا کرکٹ ہو نزدیکی دکاندار پر جرمانہ کیا جائے بلاشبہ منگلا روڈ گندگی کا ڈھیر بن چکا ہے اس طرف خصوصی توجہ دینے کی ضرورت ہے





0 comments

Recent Posts

See All
bottom of page