top of page

اسسٹنٹ کمشنر دینہ کی عدم دلچسپی ۔ صرف فوٹوز سیشن تک محدود۔ ہر طرف مسائل کا ڈھیر۔ شہری پریشان

دینہ(پروفیسر خورشید ڈار)انتظامی صلاحیتوں کے مالک اسسٹنٹ کمشنر کی تحصیل دینہ کو اشد ضرورت محسوس ہوتی ہے کمشنر راولپنڈی مفاد عوام الناس مثبت ایکشن لیں سماجی زعماء دینہ مقام افسوس ہے کہ گزشتہ آٹھ ماہ سے تحصیل دینہ میں کوئی ایسا کام نہیں ہوا جس کی کھل کر تعریف کی جائے عوام کے مفاد کو ہمیشہ نظر انداز کیا گیا ہے صرف فوٹو سیشن کروانا سمجھا گیا ہے منگلا روڈ کی ابتر حالت نیز تجاوزات مقامی انتظامیہ کی عدم دلچسپی کا ثبوت ہیں ڈپٹی کمشنر جہلم مفاد عوام سورج طلوع ہونے سے قبل سبزی منڈی جہلم اور دینہ کی وزٹ کرتے ہیں سکولوں میں جاکر بحیثیت معلم بلیک بورڈ کا استعمال کر کے اساتذہ کی رہنمائی کرتے ہیں تحصیل دینہ کا سربراہ ایسے کام کرنے سے کیوں گریزاں ہیں سبزی پھل فروش من مانی کرتے ہیں متعلقہ آفیسر نے جرمانہ کرنے کی ذہمت گوارا نہیں کی 55 روپے پٹرول کا ریٹ کم ہو چکا ہے رکشے والے اب بھی 25 روپے فی کلو میٹر کرایہ حاصل کرتے ہیں دینہ تا نکورر کا فاصلہ چار کلومیٹر ہے کرایہ 100 روپے وصول کیا جاتا ہے عوام کے مفاد کے بجائے رکشے والے کے مفاد کا خیال مقامی انتظامیہ کیوں رکھتی ہے سرکاری ملازمین وقت مقرر پر حاضر ڈیوٹی ہونے سے قاصر ہوتے ہیں اس طرف توجہ نہیں دی گئی سائل اگر کوئی درخواست لے کر دادرسی کے لیے جائے تو متعلقہ دفتر شنوائی نہیں کرتا مختصر الفاظ میں ہر وہ کام جو غیر ضروری تھا اس کو فوٹو سیشن کے لیے کیا گیا جبکہ عوام کے مفاد میں تاحال کوئی قابل ذکر کام نہیں کیا گیا ان حالات میں سماجی زعماء دینہ نے ڈپٹی کمشنر جہلم اور کمشنر راولپنڈی سے اپیل کی ہے کہ وہ مفاد عوام بروقت ایکشن لیں

0 comments
bottom of page